بارش سے کونسی بیماریاں ہو سکتی ہیں؟

بارش سے کونسی بیماریاں ہو سکتی ہیں؟

پاکستان بھر میں تیز بارشوں کا سلسلہ شروع ہونے جا رہا ہے۔ بارش میں کئی طرح کے انفیکشن اور بیماریوں کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ ایسے میں یہ جاننا ضروری ہو جاتا ہے کہ بارش کے موسم میں اپنے آپکو کن مسائل سےبچاناہے؟

آپ برسات کے موسم میں کیوں بیمار ہوتے ہیں

دراصل بارش کے موسم میں ماحول میں بہت نمی ہو تی ہے۔ کسی بھی عمر کے

 لوگ اس مسائل کا شکار ہو سکتے ہیں ،یہ

 حالت بیکٹریا اور وائرس کے پھلنے پھولنےکیلئے بہترین ہے۔ اس سے وائرس اور بیکتریل انفیکشن کی وجہ سے بہت سی بیماریاں ہو سکتی ہیں۔

انفلوئنزا کی بیماری

موسم کی اچانک تبدیلی اور درجہ حرارت میں اتار چڑھاؤ انفلوئنزا کا سبب بن سکتا ہے، یہ ایک وائرل انفیکشن ہے، جو 1 شخص سے دوسرے شخص میں پھیلتا ہے، اس بیماری کی علامات میں پٹھوں میں درد، بخار،، ناک بند ہوناگلے میں خراش َ اور کھانسی شامل ہیں۔

ڈینگی کا خطرہ

ڈینگی مادہ ایٹیز مچھروں کی وجہ سے پھیلتا ہے۔ ڈینگی کے دوران پلیٹس کی تعداد میں کمی واقع ہوتی ہے،یہ مچھر دن میں یا شام میں کاٹتے ہیں۔ اس بیماری کی علامات میں بخار کے بعد جسم میں درد شامل ہیں،۔۔

ٹائیفائیڈ

برسات کے موسم میں ٹائیفائیڈ کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے، یہ بیماری پانی اور آلودہ کھانے کی وجہ سے ہوتی ہے۔ اسکی علامات میں ، کمزوری،تیز بخار ، پیٹ میں درد، طویل عرصے تک بھوک کا نہ لگنا، جیسے مسائل شامل ہوسکتے ہیں۔

ملیریا

بارش کے موسم میں سیلاب کی وجہ سے مچھروں کی افزائش شروع ہوجاتی ہے۔ اسکی علامات میں، کانپنا، جسم میں سردی، تیز بخار شدید خون کی کمی ،زیادہ پسینہ آنا شامل ہیں۔

چکن گونیا

چکن گونیا کی بیماری برسات کے موسم میں ہوتی ہے۔ اسکو پھیلانے والے مچھر، پودوں،کولروں اور پانی کے پائپوں میں پرورش پاتے ہیں۔ چکن گونیا جسم میں ، بخار، تھکاوٹ ،جوڑوں کے شدید درد اور سردی جیسے مسائل کا سب بن سکتا ہے۔

کوئٹہ،پولیس اہلکار پر تشدد کرنے والا ایم پی اے کا بھتیجا گرفتار

پی ٹی آئی کو بڑا دھچکہ،اہم رکن مستعفی

اپنا تبصرہ لکھیں