سعودیہ کی پی آئی اے سمیت کئی منصوبوں میں سرمایہ کاری کی پیشکش

سعودیہ کی پی آئی اے سمیت کئی منصوبوں میں سرمایہ کاری کی پیشکش

وزیراعظم ہاؤس میں ہونے والی ملاقات میں سعودی عرب کے وفد نے پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز (پی آئی اے) سمیت متعدد منصوبوں میں سرمایہ کاری کی پیشکش کی۔ اجلاس میں اسحاق ڈار سمیت وفاقی وزراء نے شرکت کی جنہوں نے وفد کو اپنی وزارتوں سے متعلق منصوبوں کے بارے میں بریفنگ دی۔ سعودی وفد کو اسلام آباد کے دو فائیو سٹار ہوٹلوں میں ٹرانسمیشن لائنز، سولر پراجیکٹس، کان کنی کے پراجیکٹس اور جوائنٹ وینچرز میں سرمایہ کاری کے مواقع کی بھی پیشکش کی گئی۔ تجویز کے مطابق ہوٹلوں کے لیے زمین کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کی ہوگی اور سرمایہ کاری سعودی عرب کرے گا جس کے بعد وہ ہوٹل تعمیر کرے گا۔وفد کو مٹیاری ٹرانسمیشن لائن اور فرسٹ ویمن بینک کی پیشکش بھی کی گئی۔ سعودی وفد سے ہیلتھ سٹی بنانے کی بھی درخواست کی گئی جس کے لیے سی ڈی اے شراکت دار بننے یا زمین دے کر پیسے لینے کو تیار ہے۔ کیپٹل ایس آئی ایف سی کے مرکزی سیکرٹری پراجیکٹس سے متعلق تمام کام سنبھال رہے ہیں۔

سعودی وفد کی صدر زرداری اور آرمی چیف جنرل سید عاصم منیر سے ملاقات بھی طے تھی۔ملاقات کے دوران وزیراعظم نے وفد کا پاکستان میں خیرمقدم کیا اور سعودی قیادت، خادم حرمین شریفین سلمان بن عبدالعزیز آل سعود اور شہزادہ محمد بن سلمان آل سعود کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان دیرینہ برادرانہ تعلقات ہیں جس کی مثال نہیں ملتی۔ انہوں نے مشکل وقت میں سعودی عرب کی پاکستان کی حمایت کو بھی سراہا۔ انہوں نے مزید کہا کہ عیدالفطر کے فوراً بعد سعودی وفد کا دورہ پاکستان خوش آئند ہے اور یہ دونوں ممالک کے درمیان سٹریٹجک اور تجارتی شراکت داری کے نئے دور کا آغاز ہے۔

وزیراعظم نے سپیشل انویسٹمنٹ فیسیلیٹیشن کونسل میں چیف آف آرمی سٹاف جنرل سید عاصم منیر کے کلیدی کردار اور ملک میں سرمایہ کاری کے فروغ کے لیے تمام اداروں کے تعاون کو اجاگر کیا۔ وفد میں سعودی نائب وزیر سرمایہ کاری انجینئر ابراہیم بن یوسف المبارک، سعودی وزیر ماحولیات، آبی وسائل اور زراعت انجینئر عبدالرحمن بن عبدالحمسین الفضلی، سعودی وزیر صنعت و معدنی وسائل انجینئر بندر بن ابراہیم بن عبداللہ الخریف، سعودی عرب کے نائب وزیر برائے سرمایہ کاری انجینئر بندر بن ابراہیم بن عبداللہ الخریف شامل تھے۔ اور اعلیٰ سعودی حکام اور سفارتی حکام۔رضا نقوی، جام کمال خان، رانا تنویر حسین، عبدالعلیم خان، ڈاکٹر مصدق ملک، سردار اویس خان لغاری، ڈپٹی چیئرمین پلاننگ محمد جہانزیب خان، رکن قومی اسمبلی رومینہ خورشید عالم، اور سرکاری افسران بھی موجود تھے

اپنا تبصرہ لکھیں