چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کا میڈیا پر اظہار برہمی

چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کا میڈیا پر اظہار برہمی

چیف جسٹس آف پاکستان قاضی فائز عیسیٰ نے وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کی جانب سے صحافیوں کو نوٹسز جاری کرنے سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران اپنے تحفظات اور شکوک کا اظہار کیا۔ تین رکنی بنچ کی سربراہی خود چیف جسٹس نے کی۔ سماعت کے دوران چیف جسٹس نے حیدر وحید کی عدم حاضری پر سوال کیا تو بیرسٹر صلاح الدین نے عدالت کو بتایا کہ وہ میڈیا ریگولیشن سے متعلق اپنی درخواست واپس لینا چاہتے ہیں۔ چیف جسٹس نے درخواست کی آزادی اظہار کو یقینی بنانے یا اسے مزید دبانے سے روکنے کی صلاحیت پر شکوک کا اظہار کیا۔ انہوں نے 2022 میں دائر درخواست کی بنیاد اور عرضی گزاروں کو اکٹھا کرنے والے مشترکہ مفادات پر بھی سوال اٹھایا۔ چیف جسٹس نے میڈیا میں منتخب رپورٹنگ اور چھ درخواست گزاروں کی گمشدگی کی بھی نشاندہی کی۔ انہوں نے میڈیا ریگولیشن کے درخواست گزاروں کو ذاتی حیثیت میں طلب کیا اور انہیں نوٹس جاری کیا۔

خاران میں معدنیات لے جانے والے ٹرک پر مسلح افراد کی فائرنگ

چیف جسٹس نے ان کی اہلیہ کے بارے میں پھیلائی جانے والی جھوٹی خبروں پر تشویش کا اظہار کیا اور صحافیوں کو ان کے اعمال کا جوابدہ ٹھہرانے کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے جھوٹی خبریں پھیلانے والے صحافیوں کی رکنیت ختم کرنے کے امکان اور پاکستان میں ہتک عزت کے قوانین کے موثر ہونے کے بارے میں دریافت کیا۔ انہوں نے یہ سوال بھی کیا کہ کیا وکلاء نے کبھی اپنے ارکان کے خلاف کارروائی کی ہے اور صحافیوں کو ذمہ دار بننے اور مالی فائدہ کے لیے سنسنی خیزی میں ملوث نہ ہونے کی ضرورت پر زور دیا۔ چیف جسٹس نے اظہار رائے کی آزادی اور عدلیہ کی آزادی کی اہمیت پر زور دیا۔

امریکی صدر کے طیارے سے صحافی کیا کیا چُرا چکے ہیں؟

اپنا تبصرہ لکھیں