زرمبادلہ کے ذخائر نو ارب ڈالر ہیں، مہنگائی 38فیصد سے کم ہوکر بارہ فیصد پر آگئی،محمد اورنگزیب

زرمبادلہ کے ذخائر نو ارب ڈالر ہیں، مہنگائی 38فیصد سے کم ہوکر بارہ فیصد پر آگئی،محمد اورنگزیب

محمد اورنگزیب نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ زرمبادلہ کے ذخائر نو ارب ڈالر ہیں، مہنگائی 38فیصد سے کم ہوکر بارہ فیصد پر آگئی، عالمی کمپنیوں کے ڈویڈنڈ کی واپسی مکمل ہوچکی ہے۔ یہ براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری کیلئے بہت اہم ہے۔
وفاقی وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے کہا کہ عالمی بینک نے داسو کے لئے ایک ارب ڈالر کی منظوری دی ہے، انٹرنیشنل فنانس کارپوریشن (آئی ایف سی) نے پی ٹی سی ایل کیلئے چار سو ملین ڈالر کی منظوری د ے دی، یہ رقم اگلے مالی سال آجائے گی، fbr نے 9.3 ٹریلین روپے کی ٹیکس وصولیاں کرلیں، جن میں گروتھ تیس فیصد ہے۔ان کا کہنا تھا کہ یہ سب میکرو استحکام کے فوائد ہیں، اور میکرو استحکام کو کیسے آگے لے کر جانا ہے یہی چیلنج ہے، میکرو استحکام لڑکھڑا گیا تو پھر باقی چیزیں کرنا مشکل ہوگا، FBRکی مکمل ڈیجیٹائزیشن کی جارہی ہے جتنی ڈیجیٹائزیشن ہوگی اتنی بہتری آئے گی،

چوری میں ایف بی آرحکام اور ٹیکس پیئرز دونوں ملوث ہیں، تالی دونوں ہاتھوں سے بنتی ہے اگر سرکار کی طرف سے کوئی کرپشن کرتا ہے تو دوسری طرف سے بھی تو کوئی کرتا ہے، اس رجحان کو روکنا ہے جس کیلئے ٹیکنالوجی کو فروغ دیا جائے گا، سیلز ٹیکس میں 7سو50 ارب روپے کی کرپشن سامنے آئی ہے، ایف بی آر میں جتنا انسانی عمل دخل کم ہو گا کرپشن بھی کم ہو گی۔
محمد اورنگزیب نے کہا کہ ملک میں اگر لیکیج نہ ہورہی ہو تو کرنے کو بہت کچھ مل جائیگا، ایف بی آر کے لیکیجز، کرپشن، چوری کو بند کرنا ہوگا۔ٹیکس دہندگان کے 30جون2024 تک کے تمام ریفنڈز اگلے 2 سے 3 دن میں جاری کردیے جائیں گے جن کی رقم 50 ارب روپے سے زائد بنتی ہے، اسی طرح ٹیکس دہندگان کے ڈی ایل ٹی ایل کے ریفنڈز بھی جلد ادا کردیے جائیں گے،
وزیر خزانہ نے کہا کہ 2022میں مفتاح اسماعیل کے دور میں ریٹیلرز پر ٹیکس عائد کرنے کی کوشش کی گئی تھی، اسی وقت اسے عائد کردینا چاہیے تھا، اگر ٹیکس لگا ہوتا تو آج اس مد میں اچھی خاصی رقم جمع ہوجاتی، اب تک 42ہزار ریٹیلرز رجسٹرڈ ہوچکے ہیں جن پر 1 جولائی سے ٹیکس لاگو ہوگا، پارلیمنٹ میں بھی کہا کہ نان فائلر کی اختراع مجھے سمجھ نہیں آتی اس اختراع کو ملک سے ختم کریں گے۔

پنشن بجٹ کا حصہ نہیں تھا مگر ای سی سی اجلاس میں فیصلہ کیا ہے ، سول ملازمین پر نئے پنشن سسٹم کا اطلاق کل سے ہو جائے گا جبکہ مسلح افواج کیلئے اگلے سال سے شروع ہوگا، آرمڈ فورسز کو ایک سال کیلئے اس لیے استثنیٰ دیا ہے کیونکہ انہوں نے اپنے ادارے کے ڈھانچے کو دیکھنا ہے۔
نئے ٹیکسز کی وجہ سے لوگ دباو¿ محسوس کر رہے ہیں، اس میں کوئی شک نہیں کہ تنخواہ دار طبقے پر بوجھ بڑھا ہے، جیسے ہی کوئی مالی گنجائش ہوئی تنخواہ دار طبقے کو ریلیف دیں گے، پیٹرولیم ڈیولپمنٹ لیوی کل سے نہیں بڑھا رہے، 70روپے پی ڈی ایل کا فوری اطلاق نہیں ہورہا۔

محمد اورنگزیب نے کہا کہ آئی ایم ایف کےساتھ جولائی کے دوران معاہدہ متوقع ہے، 2018 میں بطور صدر ایچ بی ایل پاکستان آگیا تھا، ایسا نہیں ہے کہ کہیں سے اٹھ کرآیا ہوں کل کہیں چلا جاو¿ں گا، دوسرے ملک کی شہریت چھوڑچکا ہوں، ادھر ہی رہنا ہے جیسے دوسرے پاکستانی ویزہ لے کر جاتے ہیں ہم بھی جائیں گے۔
امریکی کانگریس میں پاکستان کے بارے میں پیش ہونے والی قرار داد کا آئی ایم ایف کے پروگرام کےساتھ کوئی تعلق نہیں ہے، آئم ایم ایف حکام اور دورہ امریکہ کے دوران ملاقاتوں میں ہونیوالی گفتگو تسلی بخش ہے، یہ آخری آئی ایم ایف پروگرام ہوگا جو تین سال کا ہوگا اسکے حجم پر بات چیت جاری ہے، جو چھ سے 8 ارب ڈالر کے درمیان ہی ہوگا۔
محمد اورنگزیب نے کہا کہ صوبوں سے ریونیو اور اخراجات پر مشاورت شروع کی ہے، صوبوں کو کہہ رہے ہیں کہ اپنے اخراجات خود اٹھائیں، ایسے منصوبے جو صرف صوبوں کے ہیں وہ صوبے ہی اپنے سالانہ پلان میں لیکر آئیں، ہم نے پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام (پی ایس ڈی پی) میں کٹوتی کی ہے ،پی ایس ڈی پی کے بجائے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ پرجائیں گے۔

اپنا تبصرہ لکھیں