عالمی معیار سے ہم آہنگ فنی اور تکنیکی تربیت کی منصوبہ بندی کا نفاذ کیا جائے،وزیراعظم کی ہدایت

عالمی معیار سے ہم آہنگ فنی اور تکنیکی تربیت کی منصوبہ بندی کا نفاذ کیا جائے،وزیراعظم کی ہدایت

اسلام آباد (ویب ڈیسک)وزیرِ اعظم محمد شہباز شریف نے تکنیکی و فنی تعلیم کو یکساں کرنے اور بیرونِ ملک پاکستانی افرادی قوت کے بہتر روزگار کیلئے پاکستان سکل کمپنی اور سکل ڈویلپمنٹ فنڈ کے قیام اور تکنیکی و فنی تربیت کے شعبے میں اصلاحات کیلئےکمیٹی قائم کرنے کی ہدایت کردی ہے۔ بدھ کووزیراعظم آفس کے میڈیاونگ سے جاری بیان کے مطاق ان خیالات کا اظہار وزیراعظم نے اپنی زیر صدارت وزارت امور سمندر پار پاکستانی و ترقی افرادی قوت اور نیشنل ووکیشنل اینڈ ٹیکنکل ٹریننگ کمیشن کے حوالے سے اعلی ٰسطحی جائزہ اجلاس میں کیا۔اجلاس میں وفاقی وزرا احد خان چیمہ، خالد مقبول صدیقی، وزیرِ مملکت شزہ فاطمہ خواجہ، چیئرمین وزیرِ اعظم یوتھ پروگرام رانا مشہود احمد خان، وزیرِ اعظم کے کوارڈینیٹر رانا احسان افضل، قومی کوارڈینیٹر خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل لیفٹیننٹ جنرل سرفراز احمد، ڈپٹی چیئرمین پلاننگ کمیشن جہانزیب خان اور متعلقہ اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔اجلاس میں وزیرِ اعظم کواین اے وی ٹی ٹی سی کے پاکستان میں افرادی قوت کی تکنیکی و فنی تربیت کے حوالے سے اقدامات کے بارے بتایا گیا

۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ این اے وی ٹی ٹی سی رواں برس 60 ہزار افراد کو تکنیکی و فنی تربیت فراہم کرے گاجبکہ اصلاحات مکمل ہونے کے بعد آئندہ تین برس میں کل 6 لاکھ افراد کو تکنیکی و فنی تربیت کی فراہمی یقینی بنائی جائے گی۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ تکنیکی و فنی تربیت کیلئے نہ صرف بیرونِ ممالک سے روزگار کے مواقع اور درکار ہنر کی معلومات کا تبادلہ یقینی بنایا جا رہا ہے بلکہ مقامی صنعت سے بھی اس حوالے سے افرادی قوت کی کھپت کا ڈیٹا حاصل کیا جاتا ہے۔ اجلاس کو مزید بتایا گیا کہ این اے وی ٹی ٹی سی نے تکنیکی اور فنی تربیت کے عالمی معیار کو یقینی بنانے کیلئے بین الاقوامی معیار کے شہرت یافتہ اداروں سے طلباء و طالبات کی سرٹیفکیشن لازمی قرار دے دی ہے۔اجلاس کو مزید بتایا گیا کہ وزیرِ اعظم کی ہدایت کے عین مطابق گلگت بلتستان اور آزاد کشمیر کے نوجوانوں کیلئے نہ صرف وفاقی سطح پر کوٹہ مختص کیا گیا ہے بلکہ ان کی خصوصی تربیت کیلئے علیحدہ پروگرام کا اجراء کیا جا رہا ہے جس کا آغاز رواں برس جون میں ہو جائے گا۔ اجلاس کو وزارتِ امورِ سمندر پار پاکستانی و ترقی افرادی قوت کے حوالے سے بھی تفصیلی بریفنگ دی گئی اور اصلاحات پر سفارشات بھی پیش کی گئیں۔وزیرِ اعظم نے این اے وی ٹی ٹی سی اور وزارت امور سمندر پار پاکستانی و ترقی افرادی قوت کی اصلاحات پر فوری سفارشات مرتب کرنے کیلئے فوری طور پر ایک کمیٹی قائم کرنے کی ہدایت کر دی۔

اجلاس میں وزیراعظم نے وزارت امورِ سمندر پار پاکستانی و ترقیِ افرادی قوت اور این اے وی ٹی ٹی سی میں اصلاحات کا فیصلہ کیا ہےاور ہدایت کی کہ ملک گیر تکنیکی و فنی تعلیم کو یکسان کرنے اور بیرونِ ملک پاکستانی افرادی قوت کے بہتر روزگار کیلئے پاکستان سکل کمپنی بنائی جائے۔ وزیرِ اعظم نے پاکستان سکل ڈویلپمنٹ فنڈ کے فوری قیام ، پاکستان سکل کمپنی اور پاکستان سکل ڈویلپمنٹ فنڈ کے قیام پر فوری طور پر کام شروع کرنے کی بھی ہدایت کی۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ پاکستان کی نواجوان افرادی قوت کو عالمی معیار کی تکنیکی و فنی تربیت کی فراہمی یقینی بنانے کیلئے این اے وی ٹی ٹی سی کو مزید فعال بنایا جائے۔تمام تکنیکی شعبوں میں عالمی شہرت یافتہ اور بین الاقوامی سرٹیفیکشنز یقینی بنائی جائیں۔

وزیرِ اعظم نے مزید ہدایت کی کہ پاکستانی افرادی قوت کی ترقی اور تکنیکی و فنی تعلیم کے معیار کو عالمی سطح پر لانے کیلئے وفاقی ادارے صوبوں کے ساتھ روابط اور تعاون یقینی بنائیں اور بہترین اور عالمی معیار کے پیشہ ورانہ تکنیکی ہنر سے لیس افرادی قوت کیلئے ریگیولیشن کا مربوط نظام یقینی بنایا جائے۔ وزیراعظم نے کہا کہ نادرا،این اے وی ٹی ٹی سی اور تمام صوبائی اداروں سے مل کر ملک میں اور بیرونِ ملک موجود افرادی قوت کا ایک مربوط اور منظم ڈیابیس بنایا جائے۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ عالمی معیار سے ہم آہنگ فنی اور تکنیکی تربیت کی منصوبہ بندی کا نفاذ کیا جائے۔

وزیرِ اعظم نے پاکستانی تکنیکی و فنی افرادی قوت کو بیرونِ ممالک روزگار کے حوالے سے کمپنیوں کے لائسنس رجیم میں بھی اصلاحات کی بھی ہدایت کی۔ وزیراعظم نے کہاکہ ایسی کمپنیوں اور لوگوں کی نشاندہی کی جائے جو پاکستانی افرادی قوت کو دھوکہ دے کر ان کو معاشی نقصان پہنچاتے ہیں۔ ایسے عناصر دنیا بھر میں پاکستان کی سبکی کا باعث بنتے ہیں۔ پاکستانی سفارتخانوں میں کمیونٹی ویلفیئر اتاشیوں کی تعیناتیوں میں میرٹ اور شفافیت کا خاص خیال رکھا جائے۔ وزیراعظم نے ہدایت کی کہ پاکستان میں تکنیکی و فنی تربیت کے شعبے کی اصلاحات کیلئے ایک کمیٹی قائم کی جائے جو شعبے کی مجموعی طور کیلئے سفارشات پیش کرے گی اور کمیٹی وزارت امور سمندر پار پاکستانی و ترقیِ افرادی قوت کی اصلاحات پر بھی سفارشات مرتب کرے گی۔

اپنا تبصرہ لکھیں